نوول کورونا وائرس کے ماخذ کا تعین نہیں کیا جا سکا،امریکی خفیہ ایجنسی کی ٹریس ایبلٹی رپورٹ

0

ستائیس تاریخ کو امریکہ  کےڈائریکٹر آف نیشنل انٹیلی جنس کے دفتر نے نوول کورونا وائرس کی ٹریس ایبلٹی رپورٹ کی غیر خفیہ تشخیص کا خلاصہ جاری کیا، جس میں کہا گیا کہ انٹیلی جنس سسٹم کے مختلف ادارے وائرس کے ماخذ کے بارے میں”لیبارٹری لیک تھیوری” اور”قدرتی ماخذ نظریہ” سمیت دو رائے کو یکجا کرنے سے قاصر ہیں۔
رپورٹ میں  وائرس کی ابتدا کے بارے میں کوئی حتمی نتیجہ نہیں دیا گیا۔تاہم رپورٹ نے نشاندہی کی کہ نوول کورونا وائرس حیاتیاتی ہتھیار کے طور پر نہیں بنایا گیا تھا۔ ایک ہی وقت میں، نوول کورونا وائرس کے لیے جینیاتی انجینئرنگ کے ذریعے ترمیم کرنا تقریباً ناممکن ہے۔ رپورٹ میں یہ بھی  کہا گیا ہے کہ چینی حکام کو وبا پھیلنے سے پہلے وائرس کے بارے میں کچھ معلوم نہیں تھا۔ 
اس سے قبل امریکی صدر جو بائیڈن نے خفیہ ایجنسیوں کو حکم دیا تھا کہ وہ نوول کورونا وائرس کے ماخذ کے بارے میں تحقیقات شروع کریں اور 90 دنوں میں تحقیقاتی رپورٹ جاری کریں۔

SHARE

LEAVE A REPLY