مسلمانوں کے ساتھ امتیازی سلوک امریکی معاشرے میں موجود لاعلاج بیماری ہے

0

امریکہ  ہمیشہ اپنے آپ کو “انسانی حقوق کا عالمی محافظ” کہتا  ہے ، لیکن اس نے طویل عرصے سے اپنے ہی ملک میں مسلمانوں کے ساتھ امتیازی سلوک اور غیر منصفانہ سلوک کی حقیقت کو نظرانداز کیا ہے اور مذہبی عقیدے کی آزادی کی راہ کو ترک کیا ہے۔ اکیسویں صدی کے آغاز سے ،امریکہ میں “اسلامو فوبیا” وقتاً فوقتاً سامنے آ رہا ہے ۔ ڈیموکریٹک اور ریپبلکن پارٹی  بھی مسلمانوں کو سیاسی ووٹ حاصل کرنے کے آلے کے طور پر استعمال کرتی ہیں۔2001 میں “11 ستمبر” کے واقعے کے بعد ، امریکیوں کی اکثریت بتدریج مسلمانوں کے خلاف خوف ، عدم اعتماد ، اور یہاں تک کہ  گہری نفرت محسوس کرتی رہی۔ ایف بی آئی کی رپورٹ کے مطابق ، 2001 میں ، امریکہ میں مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز جرائم میں 1،600فیصد اضافہ ہوا۔ نام نہاد “اسلامو فوبیا کی صنعت” بھی آہستہ آہستہ  امریکہ میں فروغ پاتی رہی ہے۔امریکہ میں بہت سارے اسلام دشمن مسلمانوں کے خلاف کتابیں شائع کرنے ، بلاگ لکھنے، اسلام مخالف انٹرویوز  وتبصرے کرنے اور غلط معلومات کی تشہیر کرنے میں مصروف ہیں اور عام مسلمانوں کو غنڈہ، تشدد پسند اور امریکہ مخالف بنا کر پیش کرتے ہیں۔سنہ  2017 سے 2018 تک  ، امریکی مسلمانوں کی ملک سے اطمینان کی شرح صرف 27فیصد رہ گئی۔ اس کے علاوہ ،متعلقہ سروے میں  جواب دہندگان میں سے 44 فیصد نے کہا کہ ایئر پو رٹ پر ان کے ساتھ امتیازی سلوک کیا گیا ، 33فیصد جواب دہندگان کا کہنا تھا کہ ملازمت کے لئے درخواست دیتے وقت ان کے ساتھ امتیازی سلوک کیا جاتا ہے ، اور 31فیصد نے کہا کہ قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ساتھ تبادلے میں ان کے ساتھ امتیازی سلوک کیا جاتا ہے۔ یہ دیکھا جاسکتا ہے کہ مسلمانوں کے خلاف یک طرفہ ، مسخ شدہ اور تنگ نظری کی جڑیں امریکی معاشرے میں گہری ہیں۔20 سال سے امریکی معاشرے میں مسلم مخالف جذبات کا مطالعہ کرنے والے ایک اسکالر نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ انتخابات کے دوران ری پبلیکن کی جانب سے پھیلایا جانے والا اسلامو فوبیا عروج پر ہوتا ہے اور ڈیموکریٹس اسلامی ممالک کے خلاف جنگ کا آغاز کرنے کے موقع پراس خوف کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں تاکہ ان جنگوں کے لئے بہانہ تلاش کیا جا سکے۔

SHARE

LEAVE A REPLY