چین اور پاکستان کے وزراءاعظم کے درمیان ٹیلی فونک بات چیت

0

سولہ تاریخ کو چین کے وزیر اعظم لی کھہ چھیانگ اور پاکستانی وزیر اعظم عمران خان کے درمیان ٹیلی فونک بات چیت ہوئی۔ اس موقع پر عمران خان نے پاکستان میں حالیہ دہشت گردحملے میں چینی اہلکاروں کی ہلاکت پر پاکستانی حکومت اور پاکستانی عوام کی جانب سے دلی تعزیت کا اظہار کیا۔انہوں نے اس واقعے کے حوالے سے جاری تحقیقات سے بھی آگاہ کیا۔

لی کھہ چھیانگ نے زخمی چینی شہریوں کے علاج معالجے اور اس واقعے کی تحقیقات کے حوالے سے پاکستان کی کاوشوں کو سراہا۔انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ چینی حکومت بیرون ملک مقیم چینی شہریوں اور اداروں کی حفاظت کو نمایاں اہمیت دیتی ہے۔اس واقعے کی تحقیقات کے لیے چینی ورکنگ گروپ پاکستان پہنچ چکا ہےجو  پاکستان کے ساتھ قریبی تعاون کا خواہاں ہے۔ امید ہے کہ پاکستان ورکنگ گروپ کو معاونت فراہم کرے گا تاکہ حقائق سامنے لاتے ہوئے دہشت گرد حملے کے مرتکب افراد کو انصاف کے کٹہرے میں لایا جاسکے۔ انہوں نے امید ظاہر کی ہے کہ پاکستان چینی اہلکاروں اور اداروں کے تحفظ کے لئے عملی اور موثر اقدامات اٹھائے گا ، اور اس طرح کے واقعات کی روک تھام کے لئے ہر ممکن کوشش کرے گا۔لی کھہ چھیانگ نے مزید کہا کہ چین ، چین۔ پاک تعلقات کو نمایاں اہمیت دیتا ہے۔دونوں فریق چاروں موسموں کے اسٹریٹجک کوآپریٹو شراکت دار ہیں اور مستحکم اسٹریٹجک مشاورت و ہم آہنگی ، عملی تعاون کے فروغ ، علاقائی امن و سلامتی کو برقرار رکھنے اور دونوں ممالک کے عوام کو بہتر طور پر فائدہ پہنچانے کے خواہاں ہیں۔عمران خان نے کہا کہ پاکستان زخمیوں کے علاج معالجے کے لئے ہر ممکن کوشش کر رہا ہے ، اور واقعے کی مکمل تحقیقات سے قصورواروں کو جلد از جلد انصاف کے کٹہرے میں لانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑے گا۔انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان چینی ورکنگ گروپ کےساتھ ہرممکن تعاون کا خواہاں ہے

SHARE

LEAVE A REPLY