تعلیمی و تربیتی مرکز نے مجھے بچا لیا ہے، تربیتی مرکز کا طالب علم

0
محمد ملاروزی چین کے سنکیانگ کے شہر اکسو میں قائم اکسو تعلیمی وتربیتی مرکز سے فارغ التحصیل طالب علم ہیں۔ ستائیس تاریخ کو ، انہوں نے چین کی سنکیانگ ویغور خود اختیار علاقے کی حکومت کے پریس آفس کے زیر اہتمام ایک خصوصی پریس کانفرنس میں کہا کہ تعلیمی وتربیتی مرکز نے مجھے بچایا ہے۔ 
دو ہزار پندرہ میں ، محمد ملاروزی نے ایک چھوٹا سا ریستوراں کھولا ۔اس دوران کچھ مذہبی انتہا پسندوں سے ان کی ملاقات ہوئی جنہوں نے انہیں بتایا کہ ہان قومیت کے چینی لوگ سب "کافر" ہیں۔ مذہبی انتہا پسندانہ خیالات سے متاثر ہوکر ، محمد ملاروزی کا مزاج مکمل طور پر تبدیل ہوگیا اور اس کا طرز عمل انتہا پسند ہوگیا ، جس کے نتیجےمیں ، رشتے دار اور دوست خوفزدہ ہو کر ان سے ملاقات سے گریز کرنے لگے۔ 
محمد ملاروزی نے کہا: "ستمبر 2017 میں ،گھر والوں نے مجھے تعلیمی و تربیتی مرکز میں پڑھنے کیلئے آمادہ کیا ۔تعلیم و تربیت کے مرکز میں پڑھائی اور تربیت کے دوران مجھے اپنی غلطیوں کا احساس ہوا اور صحیح اور غلط کی سمجھ آگئی اور قانونی اور غیر قانونی کاروائیوں کے درمیان فرق کی بھی پہچان ہوگئی ۔تعلیمی و تربیتی مرکز میں ، میں نے اپنی دلچسپی کے تربیتی کورس میں بھی داخلہ لیا۔چونکہ مجھے ایک ریستوراں چلانے کا تجربہ تھا ، اس لئے میں نے باورچی کورس کا انتخاب کیا۔
 دسمبر ، 2019 میں محمد ملاروزی نے باضابطہ طور پر اپنا ریسٹورنٹ کھولا ۔ان کے ریستوران میں روزانہ کافی صارفین کھانا کھانے آتے ہیں۔ بہت سارے صارفین کا کہنا ہے کہ ان کا کھانا پہلے سے بہتر ہوگیا ہے۔ اس وقت محمد ملاروزی کے ریستوراں میں 55 ملازمین ہیں ، اور ریستوراں کا ماہانہ کاروباری حجم تقریبا 500000 یوآن ہے اور سالانہ خالص آمدنی 450000 یوآن ہے۔محمد مروزی نے کہا کہ وہ ماضی میں اس کا تصور بھی نہیں کر سکتے تھے۔
SHARE

LEAVE A REPLY