سنکیانگ میں تمام نسلی گروہوں کو مذہبی آزادی کی ضمانت اور آزادی حاصل ہے

0

چین کے سنکیانگ ویغور خود اختیار علاقے کی حکومت  نے 20 تاریخ کو سنکیانگ کے امور سے متعلق ایک پریس کانفرنس منعقد کی۔ سنکیانگ ویغور خود اختیار علاقے کی حکومت کے پریس آفس کے ترجمان ، ایلیجان عنایتی نے پریس کانفرنس میں کہا کہ سنکیانگ کے مذہبی امور کے بارے میں سابق امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو کے بے بنیاد بیانات کا مقصد سنکیانگ میں مختلف قومیتوں کے عوام کے درمیان تعلقات کو بگاڑناہے۔درحقیقت ،سنکیانگ میں تمام نسلی گروہوں کے لوگوں کے مذہبی عقیدے کی آزادی کا بھر پور احترام اور حفاظت کی جاتی ہے۔
ایلیجان عنایتی  نے کہا کہ چینی آئین میں یہ دفعات درج ہیں کہ شہریوں کو مذہبی عقیدے کی آزادی حاصل ہے ،کوئی بھی سرکاری ایجنسی ، سماجی تنظیم یا فرد شہریوں کو مذہب  اختیار کرنے یا نہ کرنے پر مجبور نہیں کرسکتا ، مذہبی عقیدہ رکھنے والے یا نہ رکھنے والے  شہریوں کے ساتھ امتیازی سلوک نہیں کیا جاسکتا. چینی حکومت عام مذہبی سرگرمیوں کی حفاظت کرتی ہے۔
ایلیجان عنایتی نے اس طرف اشارہ کیا کہ سنکیانگ میں ، تمام نسلی گروہوں کے مسلمان معمول کی مذہبی سرگرمیاں کرتے ہیں ،مساجد اور اپنے گھروں میں اپنی  مرضی  کے مطابق  اسلامی تعطیلات منا تے ہیں ، عبادت ، نماز ، تبلیغ ، روزہ  اور  دوسری دینی سرگرمیوں کو مکمل قانونی تحفظ حاصل ہے اور کبھی کسی نے مداخلت نہیں کی ہے۔ اس سلسلے میں مارچ 2019 میں ، اسلامی تعاون تنظیم کے وزرائے خارجہ کی کونسل نے بھی ایک قرارداد منظور  کی تھی ، جس میں مسلمانوں کی دیکھ بھال کے لئے چین کی کوششوں کی تعریف کی گئی ہے۔

SHARE

LEAVE A REPLY